ایک خاموش سبق


ایک خاموش سبق

(ایک بار ضرور پڑھئے گا پلیز )

ﺍﻭﺭ ﯾﮧ ﺭﻭﭨﯽ ﺍﺑّﺎ ﮐﮯ ﻟﯿﮯ ﺍﺱ ﻧﮯ ﻣﭩﯽ ﮐﯽ ﺭﻭﭨﯽ ﺑﻨﺎ ﮐﺮ ﺗﻮّﮮ ﭘﮧ ﮈﺍﻟﯽ ﺗﺐ ہی ﺑﯿﺮﻭﻧﯽ ﺩﺭﻭﺍﺯﮮ ﭘﺮﮐﮭﭩﮑﺎ ﮨﻮﺍ ﺗﮭﺎ 

ﺩُﺭِ ﻧﺠﻒ ﻧﮯ ﮔﺮﺩﻥ ﮔﮭﻤﺎ ﮐﺮ ﺩﯾﮑﮭﺎ اﺑﺎ ﺍﭘﻨﯽ ﺳﺎﺋﯿﮑﻞ ﺳﻤﯿﺖ ﮔﮭﺮ ﻣﯿﮟ ﺩﺍﺧﻞ ہو ﺭﮨﮯ ﺗﮭﮯ ﻭﮦ ﻧﮧ ﺟﺎﻧﮯ ﮐﺲ ﺧﯿﺎﻝ ﮐﮯ ﺗﺤﺖ ﺑﮭﺎﮒ ﮐﺮ ﺍﺑّﺎ ﮐﮯ ﭘﺎﺱ ﺁﺋﯽ تهی ﺍﻭﺭ ﺍﻧﮑﺎ ہاﺗﮫ ﺗﮭﺎﻡ ﻟﯿﺎ ﺗﮭﺎ ﺑﺎﭖکو ﺍﭘﻨﯽ ﻃﺮﻑ ﻣﺘﻮﺟﮧ ﮐﺮﻧﮯ ﮐﯽ ﯾﮧ ﻣﻌﺼﻮﻡ ﺳﯽ ﮐﻮﺷﺶ ﺑﺎﻟﮑﻞ ﻏﯿﺮ ﺍﺭﺍﺩﯼ ﺗﮭﯽ.

ﺍﻓﻮﮦ ہٹو ﭘﯿﭽﮭﮯ ہاﺗﮫ ﺩﯾﮑﮭﮯہیں ﺗﻢ ﻧﮯ ﺍﭘﻨﮯ اﺑﺎ ﻧﮯ ﺍﺳﮑﺎ ﻣﭩﯽ ﺳﮯ ﻟﺘﮭﮍﺍ ﮨﻮﺍ ﻧﻨﮭﺎ ﺳﺎہاﺗﮫ ﺳﺨﺘﯽ ﺳﮯ ﺟﮭﭩﮏ ﺩﯾﺎ ﺗﮭﺎ ﮔﮭﺮ ﻣﯿﮟ ﺩﺍﺧﻞ ہوﺗﮯ ہی ﻣﻨﺤﻮﺱﺻﻮﺭﺗﯿﮟ ﺳﺎﻣﻨﮯ ﺁ ﮐﮭﮍﯼ ہوﺗﯽ ہیں اﻧﮩﻮﮞ ﻧﮯ ﺑﺎﺯﻭ ﺳﮯ ﭘﮑﮍ ﮐﺮ ﺍﺳﮯ ﺍﯾﮏ ﻃﺮﻑ ﺩﮬﮑﯿﻼ ﺗﻮ ﻭﮦ ﻟﮍﮐﮭﮍﺍ ﮐﺮ ﮔﺮ ﮔﺌﯽ ﻣﭩﯽ ﺳﮯ ﺑﻨﮯ ہوﺋﮯ ﺑﺮﺗﻦ ﺍﺳﮑﮯﮔﮭﭩﻨﻮﮞ ﺍﻭﺭ ہاﺗﮭﻮﮞ ﮐﮯ ﺯﻭﺭ ﺳﮯ ﭼﻮﺭ ﭼﻮﺭ ہو ﮔﺌﮯ ﺗﮭﮯ.

ﺍﺳﮑﯽ ﺑﮍﯼ ﺑﮍﯼ ﺷﻔﺎﻑ ﺁﻧﮑﮭﻮﮞ ﻣﯿﮟ ﺁﻧﺴﻮ ﺑﮩﺖ ﺟﻠﺪ ﭼﻠﮯ ﺁﺋﮯ ﺗﮭﮯ.

ﺍﺱ ﻧﮯ ﭘﻠﭧ ﮐﺮ ﺩﯾﮑﮭﺎ ﺍﺑﺎ ﺻﺤﻦ ﻣﯿﮟ ﺑﭽﮭﯽ ﭼﺎﺭﭘﺎﺋﯽ ﭘﺮ ﺑﯿﭩﮫ ﭼﮑﮯ ﺗﮭﮯ.

ﻣﯿﻼ ﮐﭽﯿﻼ ﺭﺍﺷﺪ ﺍﻧﮑﯽ ﮔﻮﺩ ﻣﯿﮟ ﭼﮍﮬﺎ ﺑﯿﭩﮭﺎ ﺗﮭﺎ اﻭﺭ ﺍﺑﺎ ﺷﺎﭘﺮ ﻣﯿﮟ ﺳﮯ ﺳﯿﺐ ﻧﮑﺎﻝ ﮐﺮ ﺩﯾﺘﮯ ہوﺋﮯ ﺍﺳﮑﮯﭘﮭﻮﻟﮯ ﭘﮭﻮﻟﮯ ﮔﺎﻟﻮﮞ ﭘﺮ ﭘﯿﺎﺭ ﮐﺮ ﺭہے تهے.

ﺩُﺭِ ﻧﺠﻒ ﮐﻮ ﺍﺱ ﻟﻤﺤﮯ ﺍﺑﺎ ﺍﻭﺭ ﺭﺍﺷﺪ ﺩﻭﻧﻮﮞ ہی ﺑﮩﺖ ﺑﺮﮮ ﻟﮕﮯ.

ﺍﺑﺎ ﻧﮯ ﻣﺠﮭﮯ ﭘﯿﺎﺭ ﻧﮩﯿﮟ ﮐﯿﺎ ﺭﺍﺷﺪ ﮐﻮﮐﯿﺎ ہے ﻣﺠﮭﮯ ﺳﯿﺐ ﻧﮩﯿﮟ ﺩﯾﺎ ﺭﺍﺷﺪ ﻧﮯ ﭘﻮﺭﺍ ﺷﺎﭘﺮ ﻟﯿﺎ ہے ﻣﯿﮟ ﺑﮭﯽ ﺍﺑﺎ ﮐﻮ ﺭﻭﭨﯽ ﻧﮩﯿﮟ ﺩﻭﻧﮕﯽ ﺁﺝ ﺑﮭﻮﮐﮯ ﺭہیں ﮔﮯ ﻭﮦ اﺱ ﻧﮯ ﻣﭩﯽ ﮐﯽ ﺭﻭﭨﯽ ﮐﻮ ﺍﭘﻨﮯ ہاﺗﮭﻮﮞ ﺳﮯ ﻣَﺴﻞ ﺩﯾﺎ.

ﺳﺎﺗﮫ ہی ﺁﻧﮑﮭﻮﮞ ﺳﮯ ﺁﻧﺴﻮ ﭘﮭﺴﻞ ﮐﺮ ﺍﺳﮑﮯ ﮔﺎﻟﻮﮞ ﭘﺮ ﭼﻠﮯ ﺁﺋﮯ ﺑﮯ ﺁﻭﺍﺯ ﺭﻭﺗﮯ ہوﺋﮯ ﺍﺱ ﻧﮯ ہاﺗﮫ ﮐﯽ ﭘﺸﺖ ﺳﮯﺁﻧﺴﻮ ﺻﺎﻑ ﮐﺮﻧﺎ ﭼﺎہے ﺗﻮ ﻣﭩﯽ ﮐﮯ ﮐﺘﻨﮯ ہی ﺫﺭّﺍﺕ ﻧﻨﮭﯽ ﺁﻧﮑﮭﻮﮞ ﻣﯿﮟ ﮔﮭﺲ ﮔﺌﮯ.

اس بچی کا کیا قصور ہے کیا صرف اس لئے کہ وہ ایک بیٹی ہے بیٹا نہیں، کیا اس کا یہ قصور ہے کہ بیٹیاں بنا کسی لالچ کے ماں باپ کو پیار کرتی ہیں

 اور 

ان بیٹوں کو سیب کهلائے جاتے ہیں کہ وہ بڑے ہو کر اپنے بوڑھے ماں باپ کو گھر سے نکال باہر کریں.

 قصور وار کون ہیں. 

سوچئے گا ضرور

Post a Comment

0 Comments