وہ اور خیال ان کا ہی اب آس پاس ہے


یادوں کی بھیڑ میں بخوشی سنگسار ہے 
جو بھی ملا یہاں پہ وہی سوگوار ہے

لگ کر  گلے سے جس کے تو رویا ہے عمر بھر
جانے وہ خود ہے غم یا ترا غم گسار ہے 

دل بھی ہمارا ہم سا ہی سادہ ہے بے زباں
ٹوٹا ہزار بار مگر برقرار ہے

وہ اور خیال ان کا ہی اب آس پاس ہے
کیا خوب زندگی میں مری اختصار ہے

اب یاد کیا دلاتے کسی بیوفا کو ہم 
توڑا تھا جس کا دل یہ وہی خاکسار ہے

بہتر یہی ہے گزری کو بس دفن کیجئے
جس سے کہیں گے حال وہی اشتہار ہے

پھر کیوں ہمیں نہ ہو یہاں مرنے کی آرزو
جب جیتے جی بھی زندگی کا انتظار ہے

ٹوٹے ہیں خواب کتنے امیدیں فنا ہوئیں 
بس ایک شے یہ عشق ہے جو پائدار  ہے

اس کے ہی دل پہ کرتا نہیں بس کوئی اثر
ویسے تو جو بھی لکھتا ہے وہ شاہکار ہے

گر لوگ بے وفا ہیں تو ابرک ہے باوفا
رشتہ اسی اصول پہ تو استوار ہے

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

Post a Comment

0 Comments