دراز عمر اور رزق میں اضافہ صلہ رحمی سے



اسلام علیکم ورحمتہ اللہ وبراکاتہ

:فضیلت درود پاک


اِنَّ اللّٰهَ وَ مَلٰٓىٕكَتَهٗ یُصَلُّوْنَ عَلَى النَّبِیِّؕ-یٰۤاَیُّهَا الَّذِیْنَ اٰمَنُوْا صَلُّوْا عَلَیْهِ وَ سَلِّمُوْا تَسْلِیْمًا

بےشک اللہ اور اس کے فرشتے درود بھیجتے ہیں اس غیب بتانے والے (نبی) پر اے ایمان والو ان پر درود اور خوب سلام ۔بھیجو



سورہ احزاب۔ آیت نمبر 56۔ ترجمہ کنزالایمان

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
درود ابراہیمی
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

اس لیے آپ بھی ایک بار درود پاک پڑھ لیجیے


اللَّهُمَّ صَلِّ عَلَى مُحَمَّدٍ، وَعَلَى آلِ مُحَمَّدٍ، كَمَا صَلَّيْتَ عَلَى إِبْرَاهِيمَ وَعَلَى آلِ إِبْرَاهِيمَ، إِنَّكَ حَمِيدٌ مَجِيدٌ

اللَّهُمَّ بَارِكْ عَلَى مُحَمَّدٍ، وَعَلَى آلِ مُحَمَّدٍ، كَمَا بَارَكْتَ عَلَى إِبْرَاهِيمَ، وَعَلَى آلِ إِبْرَاهِيمَ، إِنَّكَ حَمِيدٌ مَجِيدٌ


۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
جمعہ اسپیشل
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔


دراز عمر اور رزق میں اضافہ صلہ رحمی سے

قرابت دار یا رشتہ دار کا حق اداکرنے کو صلہ رحم کہتے ہیں اس کے برعکس اگر رشتہ دار کا حق ادا نہ کیا جائے تو اسے قطع رحم کہا جائے گا۔حق ادا کرنے سے مراد یہ ہے کہ اپنے قریبی رشتہ داروں کے ساتھ حسن سلوک کا معاملہ کیا جائے، چاہے ان کا تعلق والدہ کی نسبت سے ہو یاوالد کے۔ قرآن پاک میں اللہ رب العزت نے اس بارے میں ارشاد فرمایا کہ،

ترجمہ:اور یاد کرو جب ہم نے بنی اسرائیل سے پختہ عہد لیا تھا کہ اللہ کے سوا کسی کی عبادت نہ کرنا اور والدین کے ساتھ اور رشتہ داروں کے ساتھ نیک سلوک کرنا۔

ترجمہ:تم سب خدا کی بندگی کرو اور اس کے ساتھ کسی کو شریک نہ بناؤ،ماں باپ کے ساتھ نیک برتاؤ کرو،رشتہ داروں اور یتیموں اور مسکینوں کے ساتھ حسن سلوک سے پیش آؤ۔

ان آیات مبارکہ سے صلہ رحمی کی اہمیت کا اندازہ کیا جاسکتا ہے کہ،اللہ نے اپنی عبادت کے ساتھ والدین اور قرابت داروں کے ساتھ نیک برتاؤ کا حکم دیا ہے ۔

صلہ رحمی کے حوالے سے حدیث مبارکہ ہے کہ عبدالرحمن بن عوفؓ کہتے ہیں کہ میں نے رسول اللہ صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم کو یہ فرماتے ہوئے سنا کہ ’’اللہ تباک تعالیٰ نے فرمایا ہے کہ میں اللہ ہوں ،میں رحمن ہوں میں نے رحم یعنی رشتہ ناطے کو پیدا کیا ہے اور رحم کو اپنے نام رحمن سے نکالا ہے ،پس جو شخص رشتے ناطے کو ملائے گا یعنی برقرار رکھے گامیں اس کو اپنی رحمت میں ملاؤں گا اور جو رشتے ناطے کو توڑے گا میں اس کو اپنی رحمت سے الگ کردوں گا‘‘۔ایک اور حدیث میں رسول اکرم صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم نے فرمایا’’جو صلہ رحمی یعنی قرابت کا حق ادا نہیں کرتا وہ جنت میں داخل نہیں ہوگا‘‘۔ان حادیث میں صلہ رحمی نہ کرنے والوں کے لئے سخت وعید آئی ہے ۔اس لئے ضروری ہے کہ ہم اپنے والدین اور رشتہ داروں کے ساتھ حسن سلوک کے ساتھ پیش آئیں ،اور جو کوئی صلہ رحمی کو اپنا منشور بنا لیتا ہے اس کے لئے ایک خصوصی انعام ہے ۔ ارشاد نبوی ہے کہ ’’جس کو پسند ہو کہ اس کی روزی میں وسعت یعنی اضافہ ہو اور عمر میں اضافہ کردیا جائے اسے چاہئے کہ صلہ رحمی کرے‘‘۔ اور فی زمانہ ہر ایک کی یہی خواہش ہے کہ اسکے رزق میں اضافہ ہو اور عمر دراز ہو تو اسلام نے اس کا ایک انتہائی آسان حل بتا دیا ہے بس عمل کرنے کی دیر ہے۔

Post a Comment

0 Comments