اللہ پر جھوٹ باندھنا حرام ہے۔



 “ السّلام علیکم و رحمة الله و برکاتہ “
فضیلت درود پاک:

اِنَّ اللّٰهَ وَ مَلٰٓىٕكَتَهٗ یُصَلُّوْنَ عَلَى النَّبِیِّؕ-یٰۤاَیُّهَا الَّذِیْنَ اٰمَنُوْا صَلُّوْا عَلَیْهِ وَ سَلِّمُوْا تَسْلِیْمًا

بیشک اللہ اور اس کے فرشتے نبی پر درود بھیجتے ہیں ۔ اے ایمان والو!ان پر درود اور خوب سلام بھیجو۔

سورہ احزاب۔ آیت نمبر 56۔ ترجمہ کنزالعرفان 


درود ابراہیمی

اس لیے آپ بھی ایک بار درود پاک پڑھ لیجیے

اللَّهُمَّ صَلِّ عَلَى مُحَمَّدٍ، وَعَلَى آلِ مُحَمَّدٍ، كَمَا صَلَّيْتَ عَلَى إِبْرَاهِيمَ وَعَلَى آلِ إِبْرَاهِيمَ، إِنَّكَ حَمِيدٌ مَجِيدٌ

اللَّهُمَّ بَارِكْ عَلَى مُحَمَّدٍ، وَعَلَى آلِ مُحَمَّدٍ، كَمَا بَارَكْتَ عَلَى إِبْرَاهِيمَ، وَعَلَى آلِ إِبْرَاهِيمَ، إِنَّكَ حَمِيدٌ مَجِيدٌ


جمعہ اسپیشل



اللہ پر جھوٹ باندھنا حرام ہے۔

اور تمہاری زبانیں جھوٹ بولتی ہیں اس لئے نہ کہو کہ یہ حلال ہے اور یہ حرام ہے کہ تم اللہ پر جھوٹ باندھو ۔ بیشک جو اللہ پر جھوٹ باندھتے ہیں وہ کامیاب نہ ہوں گے۔ تھوڑاسا فائدہ اٹھانا ہے اور ان کے لیے دردناک عذاب ہے۔
سورہ النحل: 16، آیت :117-116 ۔ترجمہ کنزالعرفان

تفسیر صراط الجنان




{وَ لَا تَقُوْلُوْا:اور نہ کہو۔}

زمانۂ جاہلیت کے لوگ اپنی طرف سے بعض چیزوں  کو حلال ، بعض چیزوں  کو حرام کرلیا کرتے تھے اور اس کی نسبت اللّٰہ تعالیٰ کی طرف کردیا کرتے تھے۔
( خازن، النحل، تحت الآیۃ: ۱۱۶، ۳/۱۴۸)
اس آیت میں  اس کی ممانعت فرمائی گئی اور اس کو اللّٰہ تعالیٰ پر اِفترا فرمایا گیا اور افترا کرنے والوں  کے بارے میں  فرمایا گیا کہ بیشک جو اللّٰہ تعالیٰ پر جھوٹ باندھتے ہیں  وہ کامیاب نہ ہوں  گے۔

اپنی طرف سے کسی چیز کو شرعاً حرام کہنا اللّٰہ تعالیٰ پر اِفترا ہے:

آج کل بھی جو لوگ اپنی طرف سے حلال چیزوں  کو حرام بتادیتے ہیں  جیسے میلاد شریف کی شیرینی، فاتحہ، گیارہویں ، عرس وغیرہ ایصالِ ثواب کی چیزیں  جن کی حرمت شریعت میں  وارد نہیں  ہوئی انہیں  اس آیت کے حکم سے ڈرنا چاہئے کہ ایسی چیزوں  کی نسبت یہ کہہ دینا کہ یہ شرعاً حرام ہیں  اللّٰہ تعالیٰ پر افترا کرنا ہے۔

{مَتَاعٌ قَلِیْلٌ:تھوڑاسا فائدہ اٹھانا ہے۔} 

یعنی ان جاہلوں  کیلئے تھوڑاسا فائدہ اٹھانا اور دنیا کی چند روزہ آسائش ہے جو باقی رہنے والی نہیں  جبکہ ان کے لیے آخرت میں  دردناک عذاب ہے۔

( خازن، النحل، تحت الآیۃ: ۱۱۷، ۳/۱۴۹)



Post a Comment

0 Comments