صحیح بخاری حدیث نمبر 7




Narrated to us Abu Yaman that narrated to us Hakim bin Nafi who said informed us Shuaib from (on the authority of) Zuhri who said informed me Ubaidullah bin Abdullah bin Utba bin Mas’ud that Abdullah bin Abbas informed him that Abu Sufyan bin Harb informed me that Heraclius had sent a messenger to him while he had been accompanying a caravan from Quraish. They were merchants doing business in Sham (Syria, Palestine, Lebanon and Jordan), at the time when Allah's Apostle had truce with Abu Sufyan and Quraish infidels. So Abu Sufyan and his companions went to Heraclius at Ilya (Jerusalem). Heraclius called them in the court and he had all the senior Roman dignitaries around him. He called for his translator who, translating Heraclius's question said to them, "Who amongst you is closely related to that man who claims to be a Prophet?" Abu Sufyan replied, "I am the nearest relative to him (amongst the group)." Heraclius said, "Bring him (Abu Sufyan) close to me and make his companions stand behind him." Abu Sufyan added, Heraclius told his translator to tell my companions that he wanted to put some questions to me regarding that man (The Prophet) and that if I told a lie they (my companions) should contradict me." Abu Sufyan added, "By Allah! Had I not been afraid of my companions labelling me a liar, I would not have spoken the truth about the Prophet. The first question he asked me about him was: 'What is his family status amongst you?' I replied, 'He belongs to a good (noble) family amongst us.' Heraclius further asked, 'Has anybody amongst you ever claimed the same (i.e. to be a Prophet) before him?' I replied, 'No.' He said, 'Was anybody amongst his ancestors a king?' I replied, 'No.' Heraclius asked, 'Do the nobles or the poor follow him?' I replied, 'It is the poor who follow him.' He said, 'Are his followers increasing decreasing (day by day)?' I replied, 'They are increasing.' He then asked, 'Does anybody amongst those who embrace his religion become displeased and renounce the religion afterwards?' I replied, 'No.' Heraclius said, 'Have you ever accused him of telling lies before his claim (to be a Prophet)?' I replied, 'No. ' Heraclius said, 'Does he break his promises?' I replied, 'No. We are at truce with him but we do not know what he will do in it.' I could not find opportunity to say anything against him except that. Heraclius asked, 'Have you ever had a war with him?' I replied, 'Yes.' Then he said, 'What was the outcome of the battles?' I replied, 'Sometimes he was victorious and sometimes we.' Heraclius said, 'What does he order you to do?' I said, 'He tells us to worship Allah and Allah alone and not to worship anything along with Him, and to renounce all that our ancestors had said. He orders us to pray, to speak the truth, to be chaste and to keep good relations with our Kith and kin.' Heraclius asked the translator to convey to me the following, I asked you about his family and your reply was that he belonged to a very noble family. In fact all the Apostles come from noble families amongst their respective peoples. I questioned you whether anybody else amongst you claimed such a thing, your reply was in the negative. If the answer had been in the affirmative, I would have thought that this man was following the previous man's statement. Then I asked you whether anyone of his ancestors was a king. Your reply was in the negative, and if it had been in the affirmative, I would have thought that this man wanted to take back his ancestral kingdom. I further asked whether he was ever accused of telling lies before he said what he said, and your reply was in the negative. So I wondered how a person who does not tell a lie about others could ever tell a lie about Allah. I, then asked you whether the rich people followed him or the poor. You replied that it was the poor who followed him. And in fact all the Apostle have been followed by this very class of people. Then I asked you whether his followers were increasing or decreasing. You replied that they were increasing, and in fact this is the way of true faith, till it is complete in all respects. I further asked you whether there was anybody, who, after embracing his religion, became displeased and discarded his religion. Your reply was in the negative, and in fact this is (the sign of) true faith, when its delight enters the hearts and mixes with them completely. I asked you whether he had ever betrayed. You replied in the negative and likewise the Apostles never betray. Then I asked you what he ordered you to do. You replied that he ordered you to worship Allah and Allah alone and not to worship any thing along with Him and forbade you to worship idols and ordered you to pray, to speak the truth and to be chaste. If what you have said is true, he will very soon occupy this place underneath my feet and I knew it (from the scriptures) that he was going to appear but I did not know that he would be from you, and if I could reach him definitely, I would go immediately to meet him and if I were with him, I would certainly wash his feet.' Heraclius then asked for the letter addressed by Allah's Apostle which was delivered by Dihya to the Governor of Busra, who forwarded it to Heraclius to read. The contents of the letter were as follows: "In the name of Allah the Beneficent, the Merciful (This letter is) from Muhammad the slave of Allah and His Apostle to Heraclius the ruler of Byzantine. Peace be upon him, who follows the right path. Furthermore I invite you to Islam, and if you become a Muslim you will be safe, and Allah will double your reward, and if you reject this invitation of Islam you will be committing a sin by misguiding your Arisiyin (peasants). (And I recite to you Allah's Statement:) 'O people of the scripture! Come to a word common to you and us that we worship none but Allah and that we associate nothing in worship with Him, and that none of us shall take others as Lords beside Allah. Then, if they turn away, say: Bear witness that we are Muslims (those who have surrendered to Allah).' (3:64). Abu Sufyan then added, "When Heraclius had finished his speech and had read the letter, there was a great hue and cry in the Royal Court. So we were turned out of the court. I told my companions that the question of Ibn-Abi-Kabsha) (the Prophet Muhammad) has become so prominent that even the King of Bani Al-Asfar (Byzantine) is afraid of him. Then I started to become sure that he (the Prophet) would be the conqueror in the near future till I embraced Islam (i.e. Allah guided me to it)." The sub narrator adds, "Ibn An-Natur was the Governor of ilya' (Jerusalem) and Heraclius was the head of the Christians of Sham. Ibn An-Natur narrates that once while Heraclius was visiting ilya' (Jerusalem), he got up in the morning with a sad mood. Some of his priests asked him why he was in that mood? Heraclius was a foreteller and an astrologer. He replied, 'At night when I looked at the stars, I saw that the leader of those who practice circumcision had appeared (become the conqueror). Who are they who practice circumcision?' The people replied, 'Except the Jews nobody practices circumcision, so you should not be afraid of them (Jews). 'Just Issue orders to kill every Jew present in the country.' While they were discussing it, a messenger sent by the king of Ghassan to convey the news of Allah's Apostle to Heraclius was brought in. Having heard the news, he (Heraclius) ordered the people to go and see whether the messenger of Ghassan was circumcised. The people, after seeing him, told Heraclius that he was circumcised. Heraclius then asked him about the Arabs. The messenger replied, 'Arabs also practice circumcision.' (After hearing that) Heraclius remarked that sovereignty of the 'Arabs had appeared. Heraclius then wrote a letter to his friend in Rome who was as good as Heraclius in knowledge. Heraclius then left for Homs. (a town in Syrian and stayed there till he received the reply of his letter from his friend who agreed with him in his opinion about the emergence of the Prophet and the fact that he was a Prophet. On that Heraclius invited all the heads of the Byzantines to assemble in his palace at Homs. When they assembled, he ordered that all the doors of his palace be closed. Then he came out and said, 'O Byzantines! If success is your desire and if you seek right guidance and want your empire to remain then give a pledge of allegiance to this Prophet (i.e. embrace Islam).' (On hearing the views of Heraclius) the people ran towards the gates of the palace like onagers but found the doors closed. Heraclius realized their hatred towards Islam and when he lost the hope of their embracing Islam, he ordered that they should be brought back in audience. (When they returned) he said, 'What already said was just to test the strength of your conviction and I have seen it.' The people prostrated before him and became pleased with him, and this was the end of Heraclius's story (in connection with his faith).
حضرت عبد اللہ بن عباس رضی اللہ عنہ سے روایت ہے کہ ابو سفیان بن حرب کو ہرقل (شاہِ روم )نے قریش کے ایک قافلے سمیت طلب کیا ، اس وقت یہ لوگ شام میں تجارت کی غرض سے گئے ہوئے تھے، یہ وہ زمانہ تھا جس میں رسول اللہﷺ نے ابو سفیان اور قریش سے ایک وقتی معاہدہ کیا ہوا تھا، غرض یہ لوگ اس کے پاس پہنچے جب ہرقل اور اسکے ساتھی ایلیا میں تھے۔ ہرقل نے اُن کو اہلِ علم اور امراء و وزارء کی ایک مجلس میں طلب کر لیا، اور مترجم کے ذریعے بات شروع ہوئی ، وہ کہنے لگا (اے عرب کے لوگو)! تم میں سے کون اس شخص (محمد ﷺ) کا قریبی رشتہ دار ہے؟"۔ ابو سفیان نے کہا "میں اس شخص کا قریبی رشتہ دار ہوں۔ تب ہرقل نے کہا " اچھا اس کو میرے پاس لاؤ اور اس کے ساتھیوں کو بھی قریب کرکے اس کے پیچھے بٹھادو، اور مترجم سے کہا ان لوگوں سے کہو میں اس (ابو سفیان) سے اُس شخص (محمد ﷺ) کے بارے میں چند سوالات کرتا ہوں، اگر یہ مجھ سے جھوٹ بولے تو تم کہہ دینا جھوٹا ہے۔ ابو سفیان نے کہا قسم اللہ کی اگر مجھ کو یہ شرم نہ ہوتی کہ یہ لوگ مجھے جھوٹا کہیں گے تو میں آپﷺ کے بارے میں جھوٹ کہہ دیتا۔ خیر پہلی بات جو اس نے مجھ سے پوچھی وہ یہ تھی کہ اس شخص کا تم میں خاندان کیسا ہے؟ میں نے کہا کہ وہ ہم میں عالی نسب ہے،کہنے لگا: کیا اس سے پہلے بھی اس کے خاندان میں کسی نے نبوت کا دعوی کیا ہے؟ میں نے کہا نہیں" کہنے لگا "اچھا اس کے بزرگوں میں سے کوئی بادشاہ گزرا ہے؟ میں نے کہا "نہیں" کہنے لگا اچھا کیاامیر لوگ اس کی پیروی کر رہے ہیں یا غریب لوگ " میں نے کہا " غریب لوگ" کہنے لگا "اس کے تابعدار لوگ(روز بروز)بڑھ رہے ہیں یا کم ہو رہے ہیں؟" میں نے کہا "بڑھ رہے ہیں" کہنے لگا "اچھا کیا اس کے دین سے کوئی مرتد بھی ہوتا ہے یا نہیں" میں نے کہا "نہیں" کہنے لگا " کیا اعلانِ نبوت سے پہلے کبھی تم نے اس کو جھوٹ بولتے دیکھا" میں نے کہا نہیں" کہنے لگا " اچھا وہ عہد شکنی کرتا ہے؟" میں نے کہا "نہیں، اب ہمارے درمیان کچھ مدت کے لیے صلح ہوئی ہے معلوم نہیں اُس میں وہ کیا کرتا ہے، ابو سفیان نے کہا اس کے علاوہ میں کوئی اور بات نہ کہہ سکا، کہنے لگا "اچھا تم اس سے(کبھی) لڑے" میں نے کہا ہاں کہنے لگا پھر تمہاری اس کی لڑائی کیسے ہوتی ہے میں نے کہا "ہمارے درمیان لڑائی ڈول کی طرح ہے۔ کبھی وہ جیت جاتے ہیں اور کبھی ہم "۔ کہنے لگا اچھا وہ تمہیں کس بات کا حکم دیتاہے۔ میں نے کہا وہ یہ کہتا ہے کہ اکیلے اللہ کی عبادت کرو اور اس کے ساتھ کسی کو شریک نہ بناؤ اور اپنے باپ دادا کی (شرک کی باتیں) چھوڑ دو، اور ہم کو نماز پڑھنے، سچ بولنے، پاکدامنی اختیار کرنے اور صلہ رحمی کا حکم دیتا ہے ، تب ہرقل نے مترجم سے کہا اس شخص سے کہو میں نے تجھ سے اُس شخص کا خاندان پوچھا تو نے کہا وہ ہم میں عالی نسب ہے اور رسول (ہمیشہ) اپنی قوم میں عالی نسب ہی بھیجے جاتے ہیں ، اور میں نے تجھ سے پوچھا کیا اس کے خاندان میں پہلے بھی کسی نے نبوت کا دعوی کیا ہے، تو آپ نے کہا نہیں اس سے میرا مطلب یہ تھا کہ اگر اس سے پہلےکسی نے یہ دعوی کیا ہوتا تو میں سمجھتا کہ یہ بھٰی ان کی پیروی کر رہا ہے، اور میں نے تجھ سے پوچھا اس کے بزرگوں میں کوئی بادشاہ گزرا ہے تو نے کہا نہیں اس سے میرا مطلب یہ تھا کہ اگر اس کے بزرگوں میں کوئی بادشاہ گزرا ہے تو میں سمجھ لوں کہ وہ شخص (پیغمبری کا بہانہ کر کے ) اپنے باپ کی بادشاہت لینا چاہتا ہے اور میں نے تجھ سے یہ پوچھا کہ اس بات کے کہنے سے پہلے تم نے کبھی اس کو جھوٹ بولتے دیکھا تو نے کہا نہیں تو اب میں نے سمجھ لیا کہ ایسا کبھی نہیں ہو سکتا کہ لوگوں پر تو جھوٹ باندھنے سے پرہیز کرے اور اللہ پر جھوٹ باندھے اور میں نے تجھ سےپوچھا کیا امیر لوگوں نے اس کی پیروی کی یا غریبوں نے تو نے کہا کہ غریبوں نے ، اور رسولوں کے تابعدار (اکثر) غریب ہی ہوتے ہیں اور میں نے تجھ سے پوچھا وہ بڑھ رہے ہیں یا گھٹ رہے ہیں تو نے کہاوہ بڑھ رہے ہیں اور ایمان کا یہی حال رہتا ہے جب تک وہ پورا نہیں ہوتا بڑھتا ہی رہتا ہے، اور میں نے تجھ سےپوچھا کوئی اس کے دین میں آکر پھر اُس کو براسمجھ کر اس سے پھر جاتا ہے تو نے کہا نہیں اور ایمان کا یہی حال ہےجب اُس کی خوشی دل میں سماجاتی ہے(تو پھر نہیں نکلتی) اور میں نے تجھ سےپوچھا وہ عہد شکنی کرتا ہے تو نے کہا نہیں اوررسول ایسے ہی ہوتے ہیں وہ عہدنہیں توڑتے اور میں نے تجھ سےپوچھاوہ تم کو کیا حکم دیتا ہےتو نے کہا وہ اللہ کی عبادت کرنے اور اسکے ساتھ کسی کو شریک نہ بنانےکا حکم دیتا ہے، اور بت پرستی سے تم کو منع کرتا اور نماز اور سچائی کا اور (حرام کاری)سے بچے رہنے کا حکم دیتا ہے پھر جو تو کہتا ہے اگر سچ ہے تو وہ عنقریب اس جگہ کا مالک بن جائے گا جہاں میرے یہ دونوں پاؤں ہیں (یعنی شام کے ملک کا) اور میں جانتا تھا کہ یہ رسول آنے والاہے لیکن میں نہیں سمجھتا تھا کہ وہ تم میں سے ہوگا، پھر اگر مجھے اس تک پہنچنے کا یقین ہو جائے تو میں اس سے ملنے کی ضرور کوشش کروں اور اگر میں اُس کے پاس (مدینہ میں) ہوتا تو اسکے پاؤں دھوتا(خدمت کرتا) پھر اُس نے رسول اللہﷺ کا خط منگوایا جو آپﷺ نے دحیہ کلبی رضی اللہ عنہ کو چھ ہجری میں دے کر بصریٰ کے حاکم کی طرف بھیجا تھا اُس نے وہ خط ہرقل کو بھیج دیا تھا، جس میں یہ لکھا تھا، شروع اللہ کے نام سے جو بہت مہربان اور رحم کرنے والا ہے، محمد اللہ کے بندے اور اسکے رسول کی طرف سے ہرقل روم کےنام ، معلوم ہو جو سیدھے رستے پر چلے اس کو سلام اس کے بعد میں تجھ کو اسلام کے کلمے (لا الہ الا اللہ محمد رسول اللہ) کی طرف بلاتا ہوں مسلمان ہو جاو تو بچ جاو گئے اللہ آپ کو دہرا ثواب دے گا، وگرنہ آپ کی رعایا کا(بھی) گناہ آپ ہی پر ہوگا، اور (یہ آیت لکھی تھی) " اے اہلِ کتاب! اس بات پر آجاؤ جو ہم اور تم میں یکساں ہے کہ ہم اللہ کے سوا کسی اور کی عبادت نہیں کریں گے، اس کے ساتھ کسی کو شریک نہیں بنائیں گے، اور اللہ کو چھوڑ کر ہم میں سےکوئی کسی اورکو اللہ نہیں بنائے گا، پھر اگر وہ(اس بات کو) نہ مانیں تو(مسلمانو)تم اُن سے کہہ دو گواہ رہنا ہم تو(ایک اللہ کے) تابعدار ہیں،ابوسفیان نے کہا جب ہرقل کو جو کہنا تھا وہ کہ چکا اور خط پڑھ چکا تو اس کے پاس بہت شور مچا اور آوازیں بلند ہوئیں اور ہمیں باہر نکال دیا گیا، میں نے اپنے ساتھیوں سے کہا :"ابو کبشہ کے بیٹے کا تو بڑا درجہ ہوگیا ہے، اس سے تو رومیوں کا بادشاہ بھی ڈرتا ہے"، (اس روز سے) مجھ کو پورا یقین ہو گیا کہ رسول اللہﷺ ضرور غالب ہوں گے یہاں تک کہ اللہ نے مجھ کو مسلمان کر دیا(زہری نے کہا) ابن ناطور جو ایلیا کا حاکم اور ہرقل کا مصاحب اور شام کے نصاریٰ کا پادری تھا،وہ بیان کرتا ہے کہ ہرقل جب ایلیا(بیت المقدس) آیا تو ایک روز صبح پریشان پریشان اٹھا، ساتھیوں نے پوچھا آج آپ کی کیفیت کیوں بدلی ہوئی ہے؟ ابن ناطور نے کہا ہرقل نجومی تھا، اس کو ستاروں کا علم تھا جب لوگوں نے اس سے پوچھا(تو کیوں رنجیدہ ہے) تو وہ کہنے لگے "میں نے آج رات ستاروں پر نظر ڈالی تو (ایسا معلوم ہوتا تھاکہ) ختنہ کرنے والوں کا بادشاہ ہم پر غالب آ گیا ہے، لہٰذا پتہ کرو کون لوگ ختنہ کرتے ہیں ساتھیوں نے کہا یہودیوں کے سوا کوئی ختنہ نہیں کرتا تو آپ اس وجہ سے پریشان نہ ہوں سلطنت کے تمام شہروں میں یہ پیغام بھیج دیں کہ جہاں جہاں یہودی ہیں انہیں قتل کر دیا جاے، وہ لوگ یہی باتیں کر رہے تھے اتنے میں ہرقل کے سامنے ایک شخص لایا گیا جس کو غسان کے بادشاہ(حارث بن ابی شمر) نے بھجوایا تھا وہ رسول اللہﷺ کا حال بیان کرتا تھا، جب ہرقل نے اس کی ساری باتیں سن لیں تو (اپنے لوگوں سے)کہنے لگا "ذرا جا کر اس شخص کو دیکھو اس کا ختنہ ہوا ہے یا نہیں" ، اُنہوں نے اس کو دیکھا اور ہرقل کو بتایا کہ اس کا ختنہ ہوا ہے اور ہرقل نے اس سے پوچھا" کیا عرب ختنہ کرتے ہیں؟اس نے کہا ہاں ختنہ کرتے ہیں" تب ہرقل نے کہا "یہی شخص ( محمد ﷺ) اس امت کے بادشاہ ہیں جو غالب ہوں گئے، پھر ہرقل نے اپنے ایک دوست(ضغاطر) کو رومیہ میں لکھا،وہ علم میں ہرقل کا ساتھی تھا اور ہرقل خود حمص کو گیا ابھی حمص سے نہیں نکلا تھا کہ اس کے دوست (ضغاطر) کا خط اس کو ملااس کی بھی رائے نبی اللہﷺ کے ظاہر ہونے میں ہرقل کے موافق تھی، یعنی رسول اللہﷺ سچے نبی ہیں۔آخر ہرقل نے روم کے سرداروں کو اپنے ایک محل میں طلب کیا، (جب وہ آگئے) تو دروازوں کو بند کروادیا پھر اوپر بالاخانے میں آ کر کہنے لگا کہ"روم کے لوگو: کیا تم اپنی کامیابی اور بھلائی اور اپنی بادشاہت پر قائم رہنا چاہتے ہو ، اگر ایسا ہے تو اس (عرب کے) نبی سے بیعت کرلو"۔ یہ سنتے ہی لوگ جنگلی گدھوں کی طرح دروازوں کی طرف لپکے، لیکن دروازے بند تھے، جب ہرقل نے دیکھا کہ ان کو ایمان سے ایسی نفرت ہے اور انکے ایمان لانے سے نا اُمید ہوگیا تو کہنے لگا "ان سرداروں کو پھر میرے پاس لاؤ" (جب وہ آئے) تو کہنے لگا "میں نے جو بات ابھی تم سے کہی وہ تمہیں آزمانے کے لیے کی تھی کہ تم اپنے دین میں کتنے مضبوط ہو ، اب میں وہ دیکھ چکا" تب سب نے اسکو سجدہ کیا اور اس سے راضی ہوگئے، یہ ہرقل کا آخری حال ہوا۔ امام بخاریؒ نے کہا اس حدیث کو صالح بن کیسان اور معمر نے بھی (شعیب کی طرح) زہری سے روایت کیا۔

Post a Comment

0 Comments