قبر


قبرستان کی دیوار پھلانگ کر وہ آہستہ سے نیچے اترا ۔۔۔۔۔ہاتھوں سے گڑھا کھودنے لگا۔۔۔ اس نے کاندھے سے لپٹی گھٹھڑی اتاری۔۔۔ چاروں طرف اس نے نگاہ دوڑائی اور گھٹھڑی کو قبر میں اتار کر دفن کر کے تیزی سے مٹی ڈالنے ڈالا ۔۔۔ آنسوؤں کی جھڑیاں اس کی آنکھوں سے جاری تھیں جو مٹی میں تحلیل ہو کر اپنا وجود کھو رہی تھیں۔۔ وہ دبے پاوں اسی طرح واپس بھاگ گیا۔۔۔
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ 

یہ راتوں رات نئی قبر کیسے بن گئی ۔۔۔  ؟؟؟ گورکن نے سوچتے ہوئے کہا۔۔۔ 
مسجد سے مولانا کو بلوایا گیا ۔۔۔ 
قبر کی تازگی بتا رہی ہے کہ یہ واردات شب کی تاریکی میں ڈالی گئی ہے۔۔ مولوی صاحب نے قبر کا بغور جائزہ لینے کے بعد کہا۔۔۔
ایک جم غفیر جمع ہو چکا تھا۔۔۔ ہرکوئی اپنی اپنی راے دے رہا تھا۔۔۔ حفاظ کو بلوایا جاے اور کچھ پڑھوایا کر قبر کو کھودنا چاھیے ۔۔۔ ایک بزرگ بولے۔۔۔
خبر جنگل میں آگ کی طرح پھیل چکی تھی۔۔۔ ہر آدمی اسی تجسس میں تھا کہ آخر اس قبر کو راتوں رات دفنانے کی کیا ضرورت پیش آئی۔۔۔؟؟ 
پولیس کو اطلاع کی جاے تا کہ قانونی سر پرستی میں یہ کام ہو سکے۔۔۔ایک سوٹیڈ بوٹیڈ آدمی نے جیب سے موبائل نکالتے ہوئے 15 پر کال ملائی۔۔۔۔
اگر میڈیا کو بھی بلا لیا جاے تو بہتر ہو گا بجاے اس کے کل کو کوئی الزام ہم پر آن ٹہرے۔۔۔ کونسلر صاحب نے حمتی فیصلہ دیتے ہوئے کہا۔۔۔ 
دن سر پر چڑھ چکا تھا۔۔۔ پولیس موبائل کا سائرن پورے بازار کو متوجہ کرتے ہوئے قبرستان کے پاس پہنچا ۔۔۔ سپاہیوں نے قبر کو چاروں طرف سے گھیر لیا۔۔۔ کوئی آگے نہ بڑھے جیسے کوئی بہت بڑا  کرمنل باہر نکلنے والا ہو۔۔۔۔
میرا مشورہ ہے کہ بم ڈسپوزل ٹیم کو بھی اطلاع کرنی چاھیے۔۔۔ ایک سپاہی نے قدرے احتیاط برتتے ہوے کہا۔۔۔ 

ہم ابھی آپ کو ایک   بریکنگ نیوز سے آگاہ کرتے چلیں کہ محلہ "آدم پور" کے قبرستان میں راتوں رات ایک قبر بنائی گئی ہے جس کے بارے میں گورکن کے ساتھ ساتھ پورا محلہ بے خبر ہے۔۔ اینکر نے گرمجوشی سے خبر کو بیان کرتے ہوئے کہا جیسے برسوں پرانے چھپے خزانے کی سرنگ مل گئی ہو۔۔۔۔۔۔۔۔۔
جی گورکن صاحب آپ کو اس قبر کے بارے میں کچھ نہیں معلوم ۔۔ ؟؟اینکر نے سوال کرتےہوئے کہا۔۔ 
نہیں جناب میں رات دیر تلک جاگتا رہتا ہوں مگر نصف شب کے بعد کب آنکھ لگی مجھے پتہ ہی نہ چلا ۔۔ قبرستان کا گیٹ بھی شام ہوتے ہی بند کر دیتا ہوں ۔۔ گورکن نے جواب دیا۔۔۔۔۔۔۔۔۔
تو یہ سب کیسے ممکن ہوا ؟؟ اینکر نے دوسرا سوال کیا۔۔
دیواروں پر خار دار تاریں ہونے کے باوجود بھی کوئی کیسے اندر آ سکتا ہے۔۔۔ ؟ گورکن نے دیواروں کی طرف حیرت بھری نگاہ  سے دیکھا ۔۔۔۔۔۔

مولانا صاحب آپ کیا کہتے ہیں؟؟ اینکر کا رخ اب مولوی صاحب کی طرف تھا۔۔
اجی کیا کہنا رب نے رات سکون کے لیے بنائی ہے مگر نافرمان انسانوں نے اسے گناہ کی آجمگاہ بنا لیا ہے اور رات کی تاریکی میں خدا کے آگے سربسجود ہونے کی بجائے گناہ گار  اپنے پاپ دفناتے ہیں۔۔ توبہ توبہ خدا رحم کرے۔۔۔مولانا نے اظہار تاسف کیا۔۔۔
آپ کچھ کہیں گے۔۔۔؟؟ اینکر نے کونسلر کی طرف مائیک کرتے ہوئے کہا۔۔۔
بس جی کیا کہیں۔۔۔۔۔ ایسے لوگوں پرافسوس ہی کیا جا سکتا ہے
ناظرین ابھی قبر کشائی کی جاے گی تو اس راز سے پردہ اٹھایا جاے گا کہ آخر اس قبر میں ہے کیا۔۔۔ہمارے ساتھ رہیے گا ابھی دوبارہ واپس آتے ہیں ایک قبر کے بعد۔۔ 
آج تو بہت دھویں دار خبر ہاتھ لگی ہے ۔۔۔ کمیرہ مین نے اینکر کے کان میں آہستگی سے کہا۔۔۔
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
حفاظ پڑھنے میں مصروف تھے سب کی نگاہیں حیرت کا مسجمہ بنی ہوئی تھیں اور دل تیز تیز دھڑک رہےتھے۔۔۔اگلے لمحے کیا ہونا والا ہے۔۔۔ 
کمیرے آن ہو چکا تھا۔۔۔ پولیس والے چوکنے ہو چکے تھے۔۔۔۔ جم غفیر قبر پر سیلاب کی مانند امڈ آیا تھا۔۔۔
بسم اللہ کر کے قبر کی کھدائی شروع کی گئی قبر زیادہ گہرئی نہیں تھی۔۔۔ سفید کپڑا نظر آنے لگا۔۔ 
ذرا احتیاط سے لاش مسخ نہ ہونے پائے ۔۔۔مولانا کی آواز نے عالم سکوت کو توڑا ۔۔۔ 
مٹی ہاتھوں سے ہٹائی جارہی تھی ۔۔۔ سب کی نگاہیں کھلی کی کھلی ہی رہ گئیں جب ایک گھٹھڑی پر نظر پڑی۔۔۔ اس کو ہاتھ لگایا تو وہ سخت معلوم ہوئی۔۔۔گورکن نے ہاتھ رک لیے۔۔۔ 
بم سکواڈ کو آنے دو ہو سکتا ہے کہ لاش کے ساتھ کوئی بم لگا ہو۔۔ انسانوں کا قتل کیا کم تھا جو  یہ دہشت گرد اب مرے ہوئیں کو مارنے چلے۔۔۔ سپاہی نے کہا۔۔ جو قبر کے عین اوپر کھڑا تھا۔۔۔ 

سب پیچھے پیچھے ہٹ جاو اور قبرستان کو خالی کر دو۔۔بم سکواڈ ٹیم نے آتے ہی حکماً کہا لوگ جو پہلے اپنی جگہ سے رتی بھر ہلنے کو تیار نہ تھے
وہ اک دم سے بھاگنے لگے ۔۔۔
ہاتھوں پر گلوز پہنے سکواڈ ٹیم کے جوان نے منہ میں کچھ کلمات پڑھے غالباً آخری بار کلمے کا ورد کر رہا تھا۔۔ موت کے سائے اس کی آنکھوں میں منڈلا رہے تھے۔۔۔۔اس نے گھٹگھڑی کو کھولتے ہوئے اپنے ہاتھوں میں کٹر کو مضبوطی سے پکڑ لیا۔۔ جونہی کانٹھ کھولی گئی تو اس میں کپڑوں کی تہہ نظر آنے لگی۔۔۔ اس نے احتیاط سے تمام کپڑوں کو اوپر نیچے کر کے دیکھا ۔۔ ایک بوکس نکلا اس کو کھولا تو وہ حیران رہ گیا۔۔۔۔ 
کوئی خطرے کی بات نہیں ہے بم سکواڈ نے ٹھنڈی سانس لیتے ہوئے کہا۔۔۔ 
لوگ جوق در جوق لاش کو دیکھنے کی چاہ میں دوڑنے لگے۔۔۔۔۔

ایک بڑا سا خط نکلا 
میرے محبوب میرا سینہ گھٹ گھٹ کر چھیلنی ہو چکا ہے۔۔۔ میرے آنسو میرے سینے کے اندر بہنے لگے ہیں۔۔ میں اپنی بینائی سے محروم ہو چلا ہوں۔۔ تمہاری محبت کی نشانی کو کب تک سنبھالتا۔۔میں نے ہمیشہ اسے اپنے سینے سے چمٹائے رکھا جیسے ماں بچے کو سینے سے لگا کر رکھتی ہے۔۔۔ پہلے پہل تو جی میں آیا کہ اس کو جلا کر ان کی راکھ کو دریا برد کر دوں مگر مجھ میں اتنی ہمت نہ ہو سکی۔۔۔ بالاخر رات کی تاریکی میں تمہاری  نشانی کو دفنا کر جا رہا ہوں ۔۔سنا تھا کہ روز حشر ہر وجود قبر سے نکلے گا۔۔۔۔ تمہاری روح کا کبھی یہاں سے گزر ہوا تو تم پر یہ راز کھلے گا۔۔۔ جب قیامت کا ناقور بجے گا حشر برپا ہو گا تو ہر مدفون جسم اپنی قبر سے اٹھے گا۔۔ تب یہ قبر بھی پھٹے گی ۔۔۔۔اے مٹی میرے مدفون کی حفاظت کرنا ۔۔۔۔

تمہارا۔۔۔ 

گھٹھڑی کے سامان کو کھولا گیا۔۔ 
تو کچھ کپڑے۔۔۔ ٹوٹی ہوئی چوڑیوں کے ٹکڑے۔۔ سرخی لگے ٹشو پیر۔۔۔ پاوں کی پائل۔۔۔ مرجھائے ہوئے گجرے کے پھول۔۔۔ کچھ زنگ آلود انگھوٹھیاں جن کے نگینے جھڑ چکے تھے۔۔۔۔ کچھ خطوط۔۔۔۔جڑوا کنگن۔۔۔ دیمک زدہ کتاب۔۔۔۔۔۔۔۔کے سوا کچھ نہ تھا۔۔۔۔۔۔۔۔۔

 یہ تو کوئی دیوانہ تھا جو سینے کا غم یہاں دفنا کر چلا گیا۔۔۔ اک درویش نے صدا لگائی اور چل دیا۔۔۔۔

Post a Comment

0 Comments