ﺍﻭﺭ ﺟﺐ ﻣﯿﮟ ﻣﺮ ﺟﺎؤﮞ..


ﺍﻭﺭ ﺟﺐ ﻣﯿﮟ ﻣﺮ ﺟﺎؤﮞ ﺗﻮ ﻣﺠﻬﮯ ﮐﺴﯽ ﺧﺸﮏ ﭘﻬﻮﻝ ﮐﯽ ﻣﺎﻧﻨﺪ ﻣﺤﺒﺖ ﮐﯽ ﮐﺴﯽ ﮐﺘﺎﺏ ﻣﯿﮟ ﻗﯿﺪ ﮐﺮ ﻟﯿﻨﺎ ﺟﺐ ﺯﻧﺪﮔﯽ ﻣﯿﮟ ﮐﺒﻬﯽ ﻓﺮﺍﻏﺖ ﭘﺎؤ ﺗﻮ ﺍﺱ ﮐﺘﺎﺏ ﮐﮯ ﺑﻮﺳﯿﺪﻩ ﺍﻭﺭﺍﻕ ﻣﯿﮞ بسی ﺍﺱ ﺧﻮﺷﺒﻮ ﮐﻮ ﺍﭘﻨﯽ ﺳﺎﻧﺴﻮﮞ ﻣﯿﮟ ﺍﺗﺎﺭﺗﮯ ہوﮰ ﻣﺠﻬﮯ ﯾﺎﺩ ﮐﺮﻧﺎ  ﯾﺎ ﭘﻬﺮ ﻣﺠﻬﮯ ﺍﯾﺴﯽ جگہ ﺩﻓﻦ ﮐﺮﻧﺎ جہاں ﭼﺎﺭﻭﮞ ﻃﺮﻑ پہاڑ  ہوﮞ  جہاں ﺭﺍﺕ ﮐﻮ ﺟﮕﻨﻮوﮞ ﮐﮯ ﻗﺎﻓﻠﮯ ﺍﻭﺭ ﺩﻥ ﮐﮯ ﻭﻗﺖ ﺗﺘﻠﯿﺎﮞ ﻣﺤﻮ ﺭﻗﺺ ہوں جہاں ﮐﺴﯽ پہاڑی ﭼﺸﻤﮯ ﮐﯽ ﺁﻭﺍﺯ ﺳﻤﺎﻋﺘﻮﮞ ﮐﻮ ﺧﻮﺑﺼﻮﺭﺕ ﺍﺣﺴﺎﺱ ﺑﺨﺸﺘﯽ ہو
جہاں ﻣﻮﺕ ﮐﺎ ﺑﺪﺻﻮﺭﺕ ﺍﺣﺴﺎﺱ ﮈﯾﺮﮮ ﮈﺍﻝ ﮐﺮ نہ ﺑﯿﭩﻬﺎ ہو  ﺍﮔﺮ ﺍﯾﺴﺎ نہ ﮐﺮ ﺳﮑﻮ ﺗﻮ ﻣﺠﻬﮯ کہیں ﮔﻬﻨﮯ ﺟﻨﮕﻠﻮﮞ ﻣﯿﮟ ﺩﻓﻦ ﮐﺮ ﺁﻧﺎ جہاﮞ ﮐﺴﯽ ﭘﯿﮍ ﮐﮯ ﻧﯿﭽﮯ ﻣﺴﺎﻓﺮ ﺭﺍستہ ﺑﻬﻮﻝ ﮐﺮ ﺁﻥ پہنچیں  ﺍﻭﺭ ﻣﯿﺮﯼ ﻗﺒﺮ ﭘﺮ ﺍﻧﺠﺎﻧﮯ ہاتھ ﺩﻋﺎوﮞ ﮐﮯ لئے ﺍﭨﻬﺘﮯ ﺭہیں ﺍﮔﺮ ﺍﯾﺴﺎ ﺑﻬﯽ نہ ﮐﺮ ﺳﮑﻮ ﺗﻮ ﻣﺠﻬﮯ ﻣﯿﺮﮮ ﺩﻭﺳﺖ ﻣﺤﺒﺖ ﮐﯽ ﮐﺴﯽ کہانی ﻣﯿﮟ ﺩﻓﻦ ﮐﺮ ﺁﻧﺎ ﺟﺲ ﮐﮯ ﮐﺮﺩﺍﺭ ﻣﺮ جائیں  ﻟﯿﮑﻦ ﻣﺤﺒﺖ ہمیشہ ﺯﻧﺪﻩ ﺭہے ﺍﮔﺮ ﺍﯾﺴﺎ ﺑﻬﯽ نہ ﮐﺮ ﺳﮑﻮ ﺗﻮ ﻣﺠﻬﮯ ﺑﺲ ﺍﭘﻨﮯ ﺩﻝ ﻣﯿﮟ ﺩﻓﻦ ﮐﺮ ﻟﯿﻨﺎ ﮐﯿﻮنکہ تمہاﺭﺍ ﺩﻝ ﻭﻩ ﻭﺍﺣﺪ جگہ ہو ﮔﯽ جہاں ﻣﺮﻧﮯ ﮐﮯ ﺑﻌﺪ ﺑﻬﯽ ﻣﯿﮟ ﯾﺎﺩﻭﮞ ﮐﯽ ﺻﻮﺭﺕ ﻣﯿﮟ ہمیشہ ﺯﻧﺪﻩ رہوں _گی  

Post a Comment

0 Comments